اتر پردیش میں انصاف کے انتظار میں مسلم خواتین

اتر پردیش بھارت کا سب سے زیادہ آبادی والی ریاست ہے اور یہاں سب سے بڑی آبادی مسلم کمیونٹی ہے. پردیش میں اسمبلی انتخابات کا پہلا مرحلہ ختم ہو گیا ہے اور باقی مرحلے جلد ختم ہو جائیں گے. گزشتہ تین سال کے دوران اس ریاست میں سات خواتین کے ساتھ اجتماعی آبروریزی کے واقعات ہوئے ہیں جس کے بعد یہاں شدید فرقہ وارانہ تشدد ہوئی. اجتماعی آبروریزی کی شکار مہلایں آج تک انصاف کی منتظر رہی ہیں.
ستمبر 2013 میں مغربی اتر پردیش کے مظفرنگر ضلع میں مسلم اےوم جاٹ برادری کے درمیان بھارتی جنتا پارٹی کے ارکان کے اشتعال انگیز تقریروں کے بعد ہوئے فسادات میں اقلیتی مسلم کمیونٹی کی خواتین کو نشانہ بنایا گیا. اس فرقہ وارانہ تشدد میں 60 سے زائد افراد کی جان چلی گئی تھی. كوال گاؤں میں مبینہ طور پر جاٹ برادری کی لڑکی کے ساتھ ایک مسلم نوجوان کی چھیڑھانی کے ساتھ یہ معاملہ شروع ہوا جس نے بعد میں فرقہ وارانہ طور لے لیا تھا.
خاص طور سے ہندوستان میں فسادات کے دوران خواتین کو نشانہ بنایا جاتا رہا ہے، خاص طور حملہ آور ان کے جسم کو نشانہ بناتے ہیں جو شرمناک ہے. اقلیتی کمیونٹی کی خواتین کو جنسی تشدد کا واحد مقصد تخلیق کیا جاتا ہے. مظفرنگر فسادات میں مسلم کمیونٹی کی عصمت دری کا شکار خواتین نے سرکاری بیان دیا ہے کہ تمام ملزم جاٹ برادری سے تھے.
مظفرنگر فسادات کے دوران جنسی تشدد کے درجنوں معاملے ہونے کے باوجود 7 مسلم خواتین رپورٹ درج کرائی تھی وہ بھی سنگین جرم سے متعلق ایک تحریری دستاویزات کے ملنے کے بعد. ان خواتین میں پھگنا گاؤں کے چھ پڑوسی گاؤں لاك کی ایک خاتون تھی جو اجتماعی عصمت دری کا شکار ہوئی تھیں.
ایمنسٹی انٹرنیشنل انڈیا نے حال ہی میں مظفرنگر اجتماعی عصمت دری سانحہ پر ‘انصاف کے لئے جدوجہد’ کے عنوان سے بروشر جاری ہے جس سے پتہ چلتا ہے کہ ان خواتین کو قانونی نظام میں تاخیر اور ریاست مشینری کی طرف سے حمایت کی کمی سے انصاف نہیں مل پا رہا ہے . یہ مہلایں آج بھی منصفانہ سماعت اور انصاف کے لئے انتظار کر رہی ہیں. .
اپنی شکایت میں ان سات خواتین نے کہا کہ ان کے گاؤں کے ہی مردوں کی طرف سے عصمت دری ہوا اور تمام الوپيو کی شناخت کی گئی. لیکن اس کے بعد بیان تبدیل کرنے کے لئے ان کو اور خاندان والوں کو دھمکیاں ملنے لگیں. جنوری 2016 میں تین مقدمات میں سے ایک کو بری کیا گیا تھا.
دو سال پہلے نئے سرے سے ان کے بیان لئے گئے لیکن ابھی تک سماعت شروع نہیں ہوئی ہے. انسانی حقوق ایڈووکیٹ ورندا گروور نے سات خواتین کے ساتھ ہوئی اجتماعی آبروریزی کے واقعہ پر خواتین کو معاوضہ، حفاظت اور ملزمان کو گرفتار کرنے سے متعلق درخواست دائر کی ہے.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *