گہلوت نے کہا کہ جب لوگ ذات پات اور مذہب کے نام پر بٹ جاتے ہیں تو سماج کمزور ہو جاتا ہے۔

راجستھان کے وزیر اعلی اشوک گہلوت نے لوگوں سے ذات پات اور مذہب سے اوپر اٹھنے کی اپیل کرتے ہوئے جمعرات کو کہا کہ ذات پات اور مذہب کے نام پر تقسیم سماج کو کمزور کرتی ہے۔ وزیر اعلیٰ کرولی میں مہاویر جی میں پنچ کلیانک فیسٹیول اور مہامستاکبھیشکا تقریب سے خطاب کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ میں کہتا ہوں کہ ذات، مذہب جیسی تمام رکاوٹوں کو توڑ کر انسان کو انسان کی خدمت کرنی چاہیے۔ بھگوان مہاویر کی بھی یہی نصیحت تھی۔گہلوت نے کہا، “بدقسمتی سے ہم ذات پات اور مذہب کے نام پر بٹے ہوئے ہیں، اس لیے معاشرہ کمزور ہو جاتا ہے۔” وزیر اعلیٰ نے کہا کہ جب بھی وہ کسی مذہبی مقام پر جائیں تو اس سے مت پوچھیں۔ اپنے لیے کچھ بھی کرو بلکہ دعا کرو کہ ہر جاندار خیریت سے ہو۔ گہلوت نے کہا کہ بھگوان مہاویر کی تعلیمات آج بھی ملک اور دنیا میں متعلقہ ہیں کیونکہ جہاں امن اور عدم تشدد کا ماحول ہوتا ہے، وہاں بھگوان کا اقامت ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ پوری دنیا کے دانشور ہندوستان کی قدیم ثقافت کا احترام کرتے ہیں جس کی بنیادی وجہ اس میں موجود امن اور عدم تشدد ہے۔ وزیر اعلیٰ نے کہا کہ پنچ کلیانک فیسٹیول کے ذریعے ریاست بھر میں سماجی ہم آہنگی کا پیغام پھیلایا جا رہا ہے اور مختلف کمیونٹیز اس کے تحت ہونے والی سرگرمیوں میں حصہ لیتے ہیں، جس سے سماج میں بھائی چارے کے جذبات کو تقویت ملتی ہے۔گہلوت نے کہا کہ امن، عدم تشدد اور سماجی معاشرے کی ترقی ہم آہنگی کے قیام سے ہی ممکن ہے۔ گہلوت نے کہا کہ انہیں بچپن سے ہی بھگوان مہاویر کی تعلیمات سے واقف ہونے کا موقع ملا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *