کانگریس نے شیوسینا کے تئیں یکجہتی کا مظاہرہ کیا، ماتوشری میں ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کی۔

ممبئی مہاراشٹر کی سیاست کا ایک نیا باب لکھا جا رہا ہے۔ ادھو ٹھاکرے نے وزیر اعلیٰ کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے اور ایکناتھ شندے سابق وزیر اعلیٰ دیویندر فڈنویس کے ساتھ گورنر بھگت سنگھ کوشیاری سے ملاقات کریں گے اور حکومت بنانے کا دعویٰ پیش کریں گے۔ اس سے پہلے ایکناتھ شندے دیویندر فڑنویس کی رہائش گاہ پہنچ چکے ہیں، جہاں دونوں رہنماؤں کے درمیان ملاقات ہو رہی ہے۔ دریں اثناء کانگریس لیڈروں اور ایم ایل ایز نے ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کی ہے۔ آپ کو بتاتے چلیں کہ مہا وکاس اگھاڑی اتحاد میں شیوسینا، نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی) اور کانگریس سمیت کئی پارٹیاں شامل ہیں۔ ایسے میں اب یہ پارٹی اپوزیشن کا کردار ادا کرتی نظر آئے گی۔ کیونکہ ادھو ٹھاکرے نہ تو حکومت کو بچانے میں کامیاب ہوئے ہیں اور نہ ہی باغی ایم ایل اے کو اپنے پاس لانے میں… ایسے میں شیوسینا کے ایم پی اور لیڈر سنجے راوت پہلے ہی واضح کر چکے ہیں کہ ہم اپوزیشن میں بیٹھنے کے لیے تیار ہیں۔ ہہ مہاوکاس اگھاڑی کی حکومت گرنے کے باوجود… کانگریس نے اتحادی دھرم کی پیروی جاری رکھی ہے۔ شیوسینا کے اندر اختلافات کی وجہ سے ایکناتھ شندے کی قیادت میں باغی متحد ہو گئے اور بی جے پی کے ساتھ مل کر حکومت بنانے کا دعویٰ کر رہے ہیں۔ لیکن کانگریس، این سی پی اب بھی شیوسینا کے ساتھ کھڑی ہے۔ ایسے میں مہاراشٹر کانگریس کے لیڈروں اور ایم ایل اے نے ماتوشری میں ادھو ٹھاکرے سے ملاقات کی۔ اس دوران آدتیہ ٹھاکرے بھی موجود تھے۔