مشرقی ترکی میں 6.8 شدت کے زلزلے سے لرز اٹھا ، 18 افراد ہلاک ، 30 لاپتہ

مشرقی ترکی میں 6.8 شدت کے زلزلے سے لرز اٹھا ، 18 افراد ہلاک ، 30 لاپتہ
ایلازگ (ترکی) مشرقی ترکی میں ایک طاقتور زلزلے میں کم از کم 18 افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوگئے۔ امدادی کارکنوں نے ہفتے کے اوائل میں منہدم عمارتوں کے بچ جانے والوں کی تلاش بھی شروع کردی۔ زلزلے کی شدت 6.8 ریکارڈ کی گئی۔ زلزلے کے بعد کم از کم 30 افراد لاپتہ ہوگئے۔ اس زلزلے کا مرکز مشرقی صوبہ الجیگ کے شہر سیویرس میں تھا۔ الجیگ میں رہنے والے 47 سالہ میلہت کین نے بتایا کہ یہ کافی خوفناک تھا ، فرنیچر ہم پر گرنے لگا۔ ہم باہر بھاگے۔ مشرقی ترکی میں ایک طاقتور زلزلے کے نتیجے میں کم از کم 18 افراد ہلاک اور سیکڑوں اور زخمی ہوگئے۔زلزلے کے بعد کم سے کم 30 افراد لاپتہ ہوگئے۔زلزلے کا مرکز مشرقی صوبہ الیزیگ کے سیوریس شہر میں تھا۔ زلزلہ متاثرین کو پناہ دینے کیلئے کھیل مراکز ، اسکول اور گیسٹ ہاؤسز کھول دیئے گئے ہیں۔ صدر رجب طیب ایردوآن نے کہا کہ زلزلے سے متاثرہ افراد کی مدد کے لئے تمام اقدامات کیے جارہے ہیں۔ انہوں نے ٹویٹر پر کہا کہ ہم اپنے لوگوں کے ساتھ ہیں۔ خوف کی وجہ سے ، جو لوگ گھروں سے بھاگ گئے ہیں وہ چل چلاتی سردی میں اپنے آپ کو گرم رکھنے کے لئے آگ جلا کر سڑکوں پر بیٹھے ہیں۔ ترک حکومت کی ڈیزاسٹر اینڈ ایمرجنسی مینجمنٹ ایجنسی (اے ایف اے ڈی) نے بتایا ہے کہ زلزلہ سیوریس میں مقامی وقت کے مطابق صبح آٹھ بجکر پانچ منٹ پر آیا۔ ترکی زلزلے سے حساس خطہ ہے۔ ترک ٹیلی ویژن پر تصاویر میں دکھایا گیا تھا کہ لوگ خوف کے مارے گھروں سے بھاگ رہے تھے اور ایک عمارت کی چھت کو آگ لگا رہے تھے۔ وزیر داخلہ ، ماحولیات اور صحت کے وزیروں نے بتایا کہ کم از کم 18 افراد کی موت ہوگئی ، ان میں سے 13 کا تعلق صوبہ الجیگ سے ہے اور پانچ دیگر کا تعلق پڑوسی صوبہ مالتیا سے ہے۔ انہوں نے بتایا کہ قریب 553 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ وزیر داخلہ سلیمان سویلو نے کہا کہ ملٹیا میں ملبے کا کوئی مضمر نہیں لیکن الجیگ میں 30 شہریوں کی تلاش کے لئے تلاشی اور امدادی کام جاری ہے۔ زلزلے سے متاثرہ افراد کو پناہ دینے کے لئے مالیتیہ میں کھیلوں کے مراکز ، اسکول اور گیسٹ ہاؤسز کھول دیئے گئے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *