عمران لانگ مارچ کے دوران حملے میں ملوث دوسرے فوجی افسر کا نام بتائیں گے

پاکستان کے سابق وزیر اعظم عمران خان نے بدھ کو دھمکی دی ہے کہ وہ ان پر حملے کے سلسلے میں ایک اور فوجی افسر کا نام ظاہر کریں گے۔ 70 سالہ خان پر جمعرات کو صوبہ پنجاب کے وزیر آباد میں وزیر اعظم شہباز شریف کی حکومت کے خلاف ‘لانگ مارچ’ کے دوران حملہ کیا گیا، جس میں انہیں دائیں ٹانگ میں گولی لگی۔ سابق وزیراعظم نے الزام لگایا تھا کہ وزیراعظم شہباز شریف، وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ اور میجر جنرل فیصل نصیر ان کے قتل کی مذموم سازش میں ملوث تھے۔ خان نے ٹویٹ کیا، “میں میجر جنرل فیصل کے ساتھ دوسرے افسر کا نام بھی ظاہر کروں گا جو (3 نومبر کو) دوپہر 12 بجے سے شام 5 بجے تک سازش پر عملدرآمد کی نگرانی کر رہا تھا۔