‘بی جے پی جمہوریت پر یقین نہیں رکھتی’، گہلوت نے کہا – ان کی پالیسیاں ملک کو برباد کرنے والی ہیں

جے پور۔ راجستھان کے وزیر اعلی اشوک گہلوت نے منگل کو بھارتیہ جنتا پارٹی کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ اس کی پالیسیاں ملک کو برباد کرنے والی ہیں۔ گہلوت نے کہا کہ بی جے پی والے جمہوریت میں یقین نہیں رکھتے اور یہ لوگ صرف جمہوریت کا نقاب پہن کر سیاست کر رہے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی انہوں نے گیانواپی مسجد وارانسی کے معاملے پر بی جے پی پر ملک میں ایک نیا تماشا رچانے کا الزام لگایا اور کہا کہ ہندو اور مسلمان صدیوں سے ایک ساتھ رہتے ہیں اور صدیوں تک ایک ساتھ رہنا ہے۔ وہ جے پور کے البرٹ ہال میں کانگریس سیوا دل کی آزادی گورو یاترا سے خطاب کررہے تھے۔ گہلوت نے کہا کہ بی جے پی کو جمہوریت پر یقین نہیں ہے، یہ لوگ جمہوریت کا نقاب پہن کر سیاست کر رہے ہیں۔ انہوں نے سوال کیا کہ جمہوریت کہاں ہے؟ سی بی آئی، انکم ٹیکس، ای ڈی کا غلط استعمال کیا جا رہا ہے، یہ کشیدگی پیدا کر رہے ہیں، بھائی بہنوں کو لڑوا رہے ہیں، ان کے نظریے میں، ان کی سوچ میں رات دن کا فرق ہے، آپ کیا دیکھ رہے ہیں، ملک میں کیا تماشے ہو رہے ہیں؟ وارانسی میں گیانواپی مسجد سروے کے معاملے میں، انہوں نے کہا، “اب وارانسی میں ایک نیا تماشا شروع ہوگا، آپ دیکھتے ہیں کہ یہ کل سے ٹی وی پر، سوشل میڈیا میں بھی شروع ہو رہا ہے۔ تقریباً 100 جگہوں پر ایسی جگہیں ہوں گی جہاں تنازعہ کھڑا کرتے رہتے ہیں، تو کب تک ملک میں ہندو مسلم لڑتے رہیں گے؟ صدیوں سے اکٹھے رہنے والوں کو صدیوں اکٹھے رہنا ہے، سب کو صدیوں اکٹھے رہنا ہے۔ پریشان نہ ہوں، اگر ہم نے بات نہیں کی تو تاریخ ہمیں معاف نہیں کرے گی۔ آج اگر ہم اپنے نظریے پر ڈٹے رہے تو کم از کم تاریخ میں یہ لکھا جائے گا کہ کانگریس کے لوگوں نے سرو دھرم سمبھاو، جمہوریت، سوشلزم کو زندہ رکھنے میں کوئی کمی نہیں کی۔انھوں نے ٹویٹ کیا، ’’ہندوؤں سمیت تمام مذاہب کے لوگ۔ مسلمان، سکھ، عیسائی، جین، بدھ، پارسی، ہندوستان میں صدیوں سے ایک ساتھ رہتے آئے ہیں اور صدیوں تک رہیں گے۔ اسی لیے نوسنکلپ شیویر سے ‘جوڈو انڈیا’ کا پیغام بھی دیا گیا ہے۔ اس سے ملک کمزور ہوتا ہے۔ یہ تماشا زیادہ دیر نہیں چلے گا۔ اس کے ساتھ گہلوت نے ایک بار پھر کہا کہ وزیر داخلہ امت شاہ، مرکزی وزیر دھرمیندر پردھان اور گجیندر سنگھ شیخاوت نے تقریباً دو سال قبل ان کی منتخب حکومت کو گرانے کی سازش کی تھی۔ انہوں نے کہا، “حکومت گرانے کی سازش کوئی معمولی نہیں تھی، امیت شاہ جی، دھرمیندر پردھان جی اور جودھپور کے شیخاوت صاحب کی”۔ انہوں نے کہا کہ شیخاوت کو اس سلسلے میں درج مقدمے میں اب بھی اپنی آواز ملی۔ نمونے نہیں دیے گئے ہیں۔