ادھو حکومت نے رانا جوڑے کے خلاف ظلم کی تمام حدیں پار کر دیں، پولیس کے ذریعے کیا گیا سلوک سنگین ہے: فڑنویس

امراوتی، مہاراشٹر سے آزاد رکن پارلیمنٹ نونیت رانا دہلی کے دورے پر ہیں اور آج لوک سبھا اسپیکر اوم برلا سے بھی ملاقات کریں گے۔ جس کے بعد بتایا جا رہا ہے کہ رانا جوڑے وزیر داخلہ امت شاہ اور بی جے پی صدر جے پی نڈا سے بھی ملاقات کر سکتے ہیں۔ لیکن نونیت رانا کے جیل سے باہر آنے کے بعد انہیں ممبئی کے لیلاوتی اسپتال میں داخل کرایا گیا۔ انہیں 8 مئی کو ہسپتال سے ڈسچارج کر دیا گیا تھا۔ نونیت رانا کے اسپتال میں داخل ہونے کے بعد ان کی خیریت جاننے کے لیے رہنماؤں کے جمع ہونے کا سلسلہ جاری رہا اور اسی سلسلے میں مہاراشٹر کے سابق وزیر اعلیٰ اور قائد حزب اختلاف دیویندر فڑنویس بھی ان کی حالت جاننے کے لیے لیلاوتی اسپتال پہنچے۔ فڑنویس نے روی رانا سے ان کی صحت کے بارے میں دریافت کیا اور کافی دیر تک بات کی۔ جس کے بعد دیویندر فڑنویس نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے مہاراشٹر حکومت پر سخت نشانہ لگایا۔ انہوں نے کہا کہ ریاستی حکومت نے امراوتی کے ایم پی نونیت رانا کے ساتھ جس طرح کا سلوک کیا وہ بہت سنگین ہے۔ مجرموں کے ساتھ بھی ایسا سلوک نہیں کیا جاتا۔ اپوزیشن لیڈر دیویندر فڑنویس نے کہا کہ ریاستی حکومت نے رانا جوڑے کے حوالے سے ظلم کی تمام حدیں پار کر دی ہیں۔ فڈنویس نے کہا کہ گزشتہ 14 دنوں میں ریاستی حکومت نے پولیس کے ذریعے ان کے ساتھ جو سلوک کیا وہ سنگین ہے۔ کسی ایک مجرم کے ساتھ بھی ایسا سلوک نہیں کیا جاتا۔ اس کے ساتھ ہی چیف منسٹر ادھو ٹھاکرے کے 14 تاریخ سے ماسک کی ضرورت ختم کرنے کے سوال پر فڑنویس نے کہا کہ یہ اچھی بات ہے۔